Home / Archives / مولانا فضل الرحمن نے ایم ایم اے میں حاصل بزنجو کو بھی شامل ہونے کیلئے دعوت دی ہے،ولی کاکڑ

مولانا فضل الرحمن نے ایم ایم اے میں حاصل بزنجو کو بھی شامل ہونے کیلئے دعوت دی ہے،ولی کاکڑ

کوئٹہ: بلوچستان نیشنل پارٹی کے مرکزی سینئر نائب صدر ملک عبدالولی کاکڑ نے جمعیت عل ء اسلام اور نیشنل پارٹی کے بیانات پر افسوس کا اظہار کر تے ہوئے کہا ہے کہ بلوچستان کے عوام کی خوش قسمتی ہے یا بد قسمتی ہے کہ سیکولر اور مذہب پرست قو تیں کیسے ایک ساتھ ہو گئے ماضی میں ایک دوسروں پر لیبل لگانے والے اپنے مفادات کی خاطر ایک دوسرے کا ساتھ دے رہے ہیں ۔

آئندہ انتخابات کے لئے ایم ایم اے بحال ہو رہی ہے مولانا فضل الرح ن ایم ایم اے میں ایک سیکولر ج عت کو شامل کر نے کے لئے میر حاصل بزنجو کو دعوت دیں تاکہ وہ موجودہ حکومت میں جو کرپشن کی ہے ان کو وہاں سے سرٹیفکیٹ مل کر دوبارہ اقتدار ملیں جمعیت عل ء اسلام کے اس بیان پر کے ماضی میں اختر مینگل کو اقتدار کی خاطر ملاؤں کے پیچھے از پڑھا کر تے تھے ملا تو مشرف کے پیچھے بھی از پڑھتے تھے اور ضیاء الحق کے پیچھے بھی از پڑھتے تھے ان کا کون احتساب دے گا۔

اپنے جاری کر دہ بیان میں کہا گیا ہے کہ ضمنی انتخابات میں بلوچستان نیشنل پارٹی نہ ثابت کر دیا ہے کہ وہ صوبے کے ایک حقیقی قوم پرست ج عت ہے اور دیگر قوم پرست ج عتوں اے این پی اور ہزارہ ڈیمو کریٹک پارٹی کے ساتھ مل کر صوبے میں برادر اقوام کے درمیان نفرتیں پھیلانے والوں کے عزائم میں خاک میں ملا دیئے اور ایک اتحاد قائم کر کے ام قوموں کو ساتھ ملا دیا نیشنل پارٹی کو حلقہ این اے260 پر اپنی شکست نظر آنے کے بعد ان مذہبی ج عت کا ساتھ دیا جنہوں نے ہمیشہ بلوچستان کے مفادات کا سودا کیا تھا اور کہتے ہیں کہ نیشنل پارٹی کے بدولت جمعیت عل ء اسلام نشست پر کامیابی حاصل کی ۔

افسوس اس بات پر ہے کہ سیکولر اور مذہب کے نام پر سیاست کرنے والے ج عتوں نے اپنے مفادات کی خاطر ایک دوسرے کا ساتھ دے کر بلوچستان کے حقوق کا سودا کیا اور آج کہتے ہیں کہ ہم نے صوبے کے مفاد کی خاطر ایسا اقدام اٹھا یا اگر صوبے کے مفاد کی خاطر اقدام اٹھا تے تو نیشنل پارٹی کو دوسری ج عت کو اقتدار میں شامل کرنے کی بجائے جمعیت کو کیوں اقتدار میں شامل نہیں کیا گیا ۔

اور بات رہی جمعیت عل ء اسلام کی کہ خود اختر مینگل ملاؤں کے پیچھے از پڑھا کر تے تھے اگر اختر مینگل نے ملاؤں کے پیچھے از پڑھا تو ملاؤں نے بھی مشرف اور ضیاء الحق کے پیچھے از پڑھا جس کی بدولت آج ملک میں جو حالات ہے ان کی ام تر ذمہ داری ان قوتوں پر عائد ہوتی ہے۔

بشکریہ: ڈیلی آزادی کوئٹہ

Share on :
Share

About Administrator

Check Also

Akhtar Mengal hopeful of winning Jhalawan seats after seat adjustment with JUI

QUETTA: “BNP and JUI F have political alliance in Balochistan since NAP was formed, both parties …

Leave a Reply

'
Share
Share
Social Media Auto Publish Powered By : XYZScripts.com